تھا شریک بزم غم میں ہم نواں کوئی نہیں

دویا جین

تھا شریک بزم غم میں ہم نواں کوئی نہیں

دویا جین

MORE BYدویا جین

    تھا شریک بزم غم میں ہم نواں کوئی نہیں

    درد دل کو حرف کرنے کا بیاں کوئی نہیں

    تھا خلاؤں میں بھٹکنا تنہا ہی جس کا نصیب

    تھا نہ چندہ سنگ اپنے کہکشاں کوئی نہیں

    رنگ بھر دو یوں کہ پھیلے بن دھنک جسم افق

    خوابوں کی تصویر سے بڑھ کے زباں کوئی نہیں

    کتنے دیواروں میں کھوئے درد و غم کے زلزلے

    آہوں سے جو ڈھ گیا ایسا مکاں کوئی نہیں

    مل کے بس وہ پل دو پل اپنے ہی گھر کو لوٹا ہے

    آئے جو بسنے زمیں پر آسماں کوئی نہیں

    دیکھتا ہے ہر کلی کو وہ بکھرتا بار بار

    گل اگانا چھوڑتا پر باغباں کوئی نہیں

    خاک کر دے گا غبار وقت تیرا یہ وجود

    جو رکے تیرے لیے وہ کارواں کوئی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے