ترے لبوں پہ اگر سرخی وفا ہی نہیں

ظفر اقبال

ترے لبوں پہ اگر سرخی وفا ہی نہیں

ظفر اقبال

MORE BY ظفر اقبال

    ترے لبوں پہ اگر سرخی وفا ہی نہیں

    تو یہ بناؤ یہ سج دھج تجھے روا ہی نہیں

    میں تیری روح کی پتی کی طرح کانپ گیا

    ہوائے صبح سبک گام کو پتا ہی نہیں

    کسی امید کے پھولوں بھرے شبستاں سے

    جو آنکھ مل کے اٹھا ہوں تو وہ ہوا ہی نہیں

    فراز شام سے گرتا رہا فسانۂ شب

    گدائے گوہر گفتار نے سنا ہی نہیں

    چمک رہا ہے مری زندگی کا ہر لمحہ

    میں کیا کروں کہ مری آنکھ میں ضیا ہی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY