ترے قریب رہوں یا کہ میں سفر میں رہوں

ظفر انصاری ظفر

ترے قریب رہوں یا کہ میں سفر میں رہوں

ظفر انصاری ظفر

MORE BY ظفر انصاری ظفر

    ترے قریب رہوں یا کہ میں سفر میں رہوں

    یہ آرزو ہے ترے حلقۂ اثر میں رہوں

    شفق شفق مجھے دیکھے نگاہ حسن شعور

    نقیب‌ مہر بنوں نغمۂ سحر میں رہوں

    یقیں کی چھاؤں میں تجھ کو جو نیند آ جائے

    میں تیرے خواب کی صورت تری نظر میں رہوں

    جمال شاہد معنی پہ جب نکھار آئے

    خیال حسن بنوں اور شعر تر میں رہوں

    یہ چاہتا ہوں کہ میخانے تک رسائی ہو

    اگر سفال بنوں دست کوزہ گر میں رہوں

    کبھی پھروں میں بیابان دل میں سرگرداں

    کبھی نگار کم آمیز کی نظر میں رہوں

    بنائیں اہل نظر سرمۂ نظر مجھ کو

    غبار بن کے اگر تیری رہ گزر میں رہوں

    ترا جمال دل آرا رہے تصور میں

    گلوں کی بزم کہ میں چاند کے نگر میں رہوں

    دعائے نیم شبی وہ کرے مری خاطر

    کچھ ایسا بن کے دل حسن عشوہ گر میں رہوں

    مرے نصیب میں ہو تیرے نام کی سرخی

    کہ جس کا تجھ سے تعلق ہو اس خبر میں رہوں

    کسی کی بزم میں جانے سے فائدہ کیا ہے

    مرے لیے یہی بہتر ہے اپنے گھر میں رہوں

    بنوں میں تیرے لیے وجہ لطف لافانی

    ضیائے عشق کی صورت دل و جگر میں رہوں

    تری ہی سمت ہمیشہ ہو میرا قبلۂ دل

    ہمیشہ محو ترے حسن معتبر میں رہوں

    ظفرؔ یہ میرے لیے تو عذاب جاں ہوگا

    خدا نہ‌ کردہ کہ میں شہر بے ہنر میں رہوں

    مآخذ:

    • کتاب : Sharar-e-sang (Pg. 73)
    • Author : Zafar Ansari Zafar
    • مطبع : Educational Publishing House (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY