تو خود بھی نہیں اور ترا ثانی نہیں ملتا

ظفر حمیدی

تو خود بھی نہیں اور ترا ثانی نہیں ملتا

ظفر حمیدی

MORE BYظفر حمیدی

    تو خود بھی نہیں اور ترا ثانی نہیں ملتا

    پیغام ترا تیری زبانی نہیں ملتا

    میں بیچ سمندر میں ہوں اور پیاس سے بیتاب

    پینے کو تو اک بوند بھی پانی نہیں ملتا

    دنیا کے کرشموں میں معمہ تو یہی ہے

    دنیا کے کرشمات کا بانی نہیں ملتا

    میرا بھی تو اک دوست تھا غم بانٹنے والا

    اب دشت بلا میں وہی جانی نہیں ملتا

    جو مرتا ہے جی اٹھتا ہے وہ روپ بدل کر

    مجھ کو تو یہاں کوئی بھی فانی نہیں ملتا

    شہکار سی تصویر مری کوئی بناتا

    بہزاد میسر نہیں مانی نہیں ملتا

    کعبے کے کسی گوشے میں مل جائے گا شاید

    بت خانے میں فردوس مکانی نہیں ملتا

    اسلوب پرانے ہیں تو الفاظ ہیں بے رنگ

    نادر سا ظفرؔ طرز لسانی نہیں ملتا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    تو خود بھی نہیں اور ترا ثانی نہیں ملتا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY