طوفان تھم چکا ہے مگر جاگتے رہو

ساغر مہدی

طوفان تھم چکا ہے مگر جاگتے رہو

ساغر مہدی

MORE BYساغر مہدی

    طوفان تھم چکا ہے مگر جاگتے رہو

    کس وقت کی ہے کس کو خبر جاگتے رہو

    شعلے بجھا کے ہم سفرو مطمئن نہ ہو

    پوشیدہ راکھ میں ہے شرر جاگتے رہو

    اب روشنی میں بھی ہے اندھیروں کا مکر و فن

    کیا اعتبار شام و سحر جاگتے رہو

    ہر ذرۂ چمن میں ہے لعل و گہر کا رنگ

    لٹنے نہ پائیں لعل و گہر جاگتے رہو

    اب رات خود ہے اپنی سیاہی سے بیقرار

    آواز دے رہی ہے سحر جاگتے رہو

    ساغرؔ یہ غم کی رات یہ راہوں کے پیچ و خم

    دشمن بھی ہے شریک سفر جاگتے رہو

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY