وفا کا ذکر ہی کیا ہے جفا بھی راس آئے

شاذ تمکنت

وفا کا ذکر ہی کیا ہے جفا بھی راس آئے

شاذ تمکنت

MORE BY شاذ تمکنت

    وفا کا ذکر ہی کیا ہے جفا بھی راس آئے

    وہ مسکرائے تو جرم خطا بھی راس آئے

    وطن میں رہتے ہیں ہم یہ شرف ہی کیا کم ہے

    یہ کیا ضرور کہ آب و ہوا بھی راس آئے

    ہتھیلیاں ہیں تری لوح نور کی مانند

    خدا کرے تجھے رنگ حنا بھی راس آئے

    دوا تو خیر ہزاروں کو راس آئے گی

    مزہ تو جینے کا جب ہے شفا بھی راس آئے

    تو پھر یہ آدمی خود کو خدا سمجھنے لگے

    اگر یہ عمر گریزاں ذرا بھی راس آئے

    اب اس قدر بھی نہ کر جستجوئے آب بقا

    گل ہنر ہے تو باد فنا بھی راس آئے

    یہ تیرا رنگ سخن تیرا بانکپن اے شاذؔ

    کہ شعر راس تو آئے انا بھی راس آئے

    مآخذ:

    • Book : Kulliyat-e-Shaz Tamkanat (Pg. 562)
    • Author : Shaz Tamkanat
    • مطبع : Educational Publishing House (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY