وہ اپنے بند قبا کھولتی تو کیا لگتی

امیر امام

وہ اپنے بند قبا کھولتی تو کیا لگتی

امیر امام

MORE BYامیر امام

    وہ اپنے بند قبا کھولتی تو کیا لگتی

    خدا کے واسطے کوئی کہے خدا لگتی

    یقین تھی تو یقیں میں سما گئی کیسے

    گمان تھی تو گماں سے بھی ماورا لگتی

    اگر بکھرتی تو سورج کبھی نہیں اگتا

    ترا خیال کہ وہ زلف بس گھٹا لگتی

    ترے مریض کو دنیا میں کچھ نہیں لگتا

    دوا لگے نہ رقیبوں کی بد دعا لگتی

    ہوئی ہے قید زمانہ میں روشنی کس سے

    بھلا وہ جسم اور اس کو کوئی قبا لگتی

    لگی وہ تجھ سی تو عالم میں منفرد ٹھہری

    وگرنہ عام سی لگتی اگر جدا لگتی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY