وہ جو کرتے تھے بات بات کا غم

قمر عباس قمر

وہ جو کرتے تھے بات بات کا غم

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    وہ جو کرتے تھے بات بات کا غم

    ان کو راس آ گیا حیات کا غم

    اے شب ہجر میرے سینے پر

    تو نے رکھا ہے کائنات کا غم

    تو بھی سورج ہے اپنی ہستی کا

    تجھ کو معلوم کیا ہو رات کا غم

    چل غم دل غم جہان لئے

    بھول جائیں تعلقات کا غم

    آج فرصت ملی تھی باہر سے

    کھا گیا اندرون ذات کا غم

    وہ پیمبر ہیں اپنی راتوں کے

    جن پہ اترا ہے چاند رات کا غم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY