وہ وسعتیں تھیں دل میں جو چاہا بنا لیا

صوفی تبسم

وہ وسعتیں تھیں دل میں جو چاہا بنا لیا

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    وہ وسعتیں تھیں دل میں جو چاہا بنا لیا

    صحرا بنا لیا کبھی دریا بنا لیا

    یوں رشک کی نگاہ سے کس کس کو دیکھتے

    ہر آرزو کو اپنی تمنا بنا لیا

    کب تک جہاں سے درد کی دولت سمیٹتے

    خود اپنے دل کو غم کا خزینہ بنا لیا

    دنیا کی کوفتوں کو گوارا نہ کر سکے

    عقبیٰ کو زندگی کا سہارا بنا لیا

    تھی کائنات حسن کی سادہ سی اک جھلک

    ہم نے نگاہ شوق سے کیا کیا بنا لیا

    اس دل کو ہم نے تیری نگاہوں کے ساتھ ساتھ

    بیگانہ کر لیا کبھی اپنا بنا لیا

    مأخذ :
    • کتاب : (Sau Baar Chaman Mahka)Kulliyat-e- Sufi Tabassum (Pg. 236)
    • Author : Sufi Ghulam Mustafa Tabassum
    • مطبع : Alhamd Publications, Lahore (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY