یا الٰہی مرا دل دار سلامت باشد

حسرتؔ عظیم آبادی

یا الٰہی مرا دل دار سلامت باشد

حسرتؔ عظیم آبادی

MORE BYحسرتؔ عظیم آبادی

    یا الٰہی مرا دل دار سلامت باشد

    وہ ولی نعمت دیدار سلامت باشد

    نیک و بد سے ہے مری خاطر ناشاد آزاد

    غم گسار اپنا غم یار سلامت باشد

    نہ رکھی دل میں ہمارے طمع خام وصال

    رشک اغیار کا آزار سلامت باشد

    گر نہ دے شربت عناب مجھے وہ لب لعل

    عشوۂ نرگس بیمار سلامت باشد

    خاکساروں کا کوئی گو نہ ہوئے پشت پناہ

    سر پہ وہ سایۂ دیوار سلامت باشد

    اس سگ کو کی نہیں کچھ مجھے مدت سے خبر

    وہ مرا یار وفادار سلامت باشد

    قتل عاشق کے تئیں گو ہووے یک شہر گواہ

    وہ ترا ناز سے انکار سلامت باشد

    مرد حق کا رہے دنیا میں علم نام بلند

    نہیں منصور اگر دار سلامت باشد

    یار کی مہر و مروت پہ نہ رکھ دل حسرتؔ

    یہ ترا عشق کا اظہار سلامت باشد

    مأخذ :
    • Deewan-e-Hasrat Azeemabadi

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY