یقیں بناتا ہے کوئی گماں بناتا ہے

آذر تمنا

یقیں بناتا ہے کوئی گماں بناتا ہے

آذر تمنا

MORE BYآذر تمنا

    یقیں بناتا ہے کوئی گماں بناتا ہے

    جو آدمی ہے الگ داستاں بناتا ہے

    شکست کرتا ہے زنجیر خانہ و محراب

    اور ایک حلقۂ آوارگاں بناتا ہے

    گل وجود سے کرتا ہے کسب کوزۂ جاں

    خمار سود میں لیکن زیاں بناتا ہے

    کمال بے خبری ہے اگر بہم ہو جائے

    مگر یہ زیست کو آساں کہاں بناتا ہے

    پس چراغ ارادہ کوئی تو ہے آذرؔ

    جو میرے شعلۂ دل کو دھواں بناتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Muntakhab Gazle.n (Pg. 13)
    • Author : Nasir Zaidi
    • مطبع : Zahid Malik (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY