Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

یہ دل جو مضطرب رہتا بہت ہے

بیدل حیدری

یہ دل جو مضطرب رہتا بہت ہے

بیدل حیدری

MORE BYبیدل حیدری

    یہ دل جو مضطرب رہتا بہت ہے

    کوئی اس دشت میں تڑپا بہت ہے

    کوئی اس رات کو ڈھلنے سے روکے

    مرا قصہ ابھی رہتا بہت ہے

    بہت ہی تنگ ہوں آنکھوں کے ہاتھوں

    یہ دریا آج کل بہتا بہت ہے

    بوقت شام اکٹھے ڈوبتے ہیں

    دل اور سورج میں یارانہ بہت ہے

    بہت ہی راس ہے صحرا لہو کو

    کہ صحرا میں لہو اگتا بہت ہے

    مبارک اس کو اس کے تر نوالے

    مجھے سوکھا ہوا ٹکڑا بہت ہے

    بیاض اس واسطے خالی ہے میری

    مجھے افلاس نے بیچا بہت ہے

    بتوں کا نام بھی پڑھتا ہے بیدلؔ

    خدا کا نام بھی لیتا بہت ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 65)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے