یوں ستم ڈھائے گئے ہیں ترے دیوانے پر

قمر عباس قمر

یوں ستم ڈھائے گئے ہیں ترے دیوانے پر

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    یوں ستم ڈھائے گئے ہیں ترے دیوانے پر

    زخم خود گریہ کناں ہے مرے افسانے پر

    مجھ کو یکسر ہی الگ رہنا پڑا ہے تم سے

    ایسا ہوتا ہے کہیں عشق کے مر جانے پر

    پہلے یک لخت چلے آتے تھے ملنے کے لیے

    اب توجہ بھی نہیں ہے مرے چلانے پر

    سوزش غم کا چراغوں کو کہاں اندازہ

    رات چیخ اٹھتی ہے جلتے ہوئے پروانے پر

    میں سمجھتا تھا مرا دل ہے مری مانے گا

    اسی کافر کا ہوا جاتا ہے سمجھانے پر

    درد فرقت ہی مری موت کا ساماں ہے قمرؔ

    دل کسی طور بہلتا نہیں بہلانے پر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY