زندگی آزار تھی آزار ہے تیرے بغیر

ذوالفقار علی بخاری

زندگی آزار تھی آزار ہے تیرے بغیر

ذوالفقار علی بخاری

MORE BYذوالفقار علی بخاری

    زندگی آزار تھی آزار ہے تیرے بغیر

    کار سہل مرگ بھی دشوار ہے تیرے بغیر

    کام یوں آ کر رکے جیسے کبھی چلتے نہ تھے

    عمر فانی وقت بے رفتار ہے تیرے بغیر

    کیا بتاؤں کس طرح اب کٹ رہی ہے زندگی

    میری ہر ہر سانس اک تلوار ہے تیرے بغیر

    تیرا غم تھا اور تجھ ہی سے بیاں کرتا تھا میں

    کون سا غم قابل اظہار ہے تیرے بغیر

    میرے غم کی تلخیوں کا اس سے کچھ اندازہ کر

    مجھ کو مے نوشی سے بھی انکار ہے تیرے بغیر

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 350)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956)
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY