زندگی سے مری اس طرح ملاقات ہوئی

علقمہ شبلی

زندگی سے مری اس طرح ملاقات ہوئی

علقمہ شبلی

MORE BYعلقمہ شبلی

    زندگی سے مری اس طرح ملاقات ہوئی

    لب ہلے آنکھ ملی اور نہ کوئی بات ہوئی

    درد کی دھوپ نہیں یاد کا سایہ بھی نہیں

    اب تو قسمت میری بے رنگئ حالات ہوئی

    صرف کل ہی نہیں اس دور میں بھی دیدہ وری

    نذر اوہام ہوئی صید روایات ہوئی

    کل تو محور تھے مری ذات کے یہ کون و مکاں

    کائنات آج جو سمٹی تو مری ذات ہوئی

    سر کو پھوڑا کئے پتھر سے سمندر سے لڑے

    صبح یوں شام ہوئی شام سے یوں رات ہوئی

    گھر مرا دیکھ لیا سیل بلا نے شبلیؔ

    آگہی کیا ہوئی اک درد کی سوغات ہوئی

    مآخذ:

    • کتاب : Be-Chehrah Lamhe (Pg. 15)
    • Author : Alqama Shibli
    • مطبع : Shaharyaar Brothers Publications (1975)
    • اشاعت : 1975

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY