آنکھیں پھوٹیں جو ایک حرف بھی پڑھا ہو

مرزا غالب

آنکھیں پھوٹیں جو ایک حرف بھی پڑھا ہو

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    مارہرے کی خانقاہ کے بزرگ سید صاحب عالم نے غالبؔ کو ایک خط لکھا۔ ان کی تحریر نہایت شکستہ تھی۔ اسے پڑھنا جوئے شیر لانے کے مترادف تھا۔ غالبؔ نے انہیں جواب دیا :

    ’’پیرو مرشد، خط ملا چوما چاٹا، آنکھوں سے لگایا ، آنکھیں پھوٹیں جو ایک حرف بھی پڑھا ہو۔ تعویذ بناکر تکیہ میں رکھ لیا.۔ ‘‘

    نجات کا طالب

    غالبؔ

    مآخذ:

    • Book: Adeebon Ke Lateefe
    • Author: Narang Saqi
    • مطبع: Educatinal publishing house

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites