فراق کا ناڑا

فراق گورکھپوری

فراق کا ناڑا

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    ایک مشاعرے میں ہر شاعر اپنا کلام کھڑے ہوکر سنارہا تھا ۔ فراق صاحب کی باری آئی تو وہ بیٹھے رہے اور مائیک ان کے سامنے لاکر رکھ دیاگیا ۔

    مجمع سے ایک شور بلند ہوا:

    ’’کھڑے ہوکر پڑھئے...کھڑے ہوکر پڑھئے ۔‘‘

    جب شور ذرا تھما تو فراق صاحب نے بہت معصومیت کے ساتھ مائیک پر اعلان کیا:

    ’’میرے پائجامے کا ڈورا ٹوٹا ہوا ہے (ایک قہقہہ پڑا) کیا آپ اب بھی بضد ہیں کہ میں کھڑے ہوکر پڑھوں؟‘‘

    مشاعرہ قہقہوں میں ڈوب گیا۔

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY