پنشن یافتہ معشوق

فراق گورکھپوری

پنشن یافتہ معشوق

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    فراق صاحب اور ساحر ہوشیارپوری ایک ساتھ امرتسر کے ایک ہوٹل میں پہنچے۔ ساحرنے ہوٹل کا رجسٹر بھرنا شروع کیا۔ فراق صاحب پاس کی ایک کرسی پر بیٹھ گئے ۔

    ساحرصاحب پیشہ کے خانہ پر پہنچے تو فراق صاحب کی طرف مڑکر بولے:

    ’’کیوں صاحب، میں اپنا پیشہ کیا لکھ دوں؟‘‘

    ’’معشوق لکھ دو۔‘‘ فراق صاحب نے انہیں یاد دلایا۔

    ’’اس عمر میں ‘‘ساحر بولے۔

    ’’تو کیا ہوا ۔ آگے پنشن یافتہ بھی لکھ دو۔‘‘فراق صاحب نے برجستہ کہا۔

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY