ہولی

MORE BYشیخ ظہور الدین حاتم

    مہیا سب ہے اب اسباب ہولی

    اٹھو یارو بھرو رنگوں سے جھولی

    ادھر یار اور ادھر خوباں صف آرا

    تماشہ ہے تماشہ ہے تماشہ

    چمن میں دھوم و غل چاروں طرف ہے

    ادھر ڈھولک ادھر آواز دف ہے

    ادھر عاشق ادھر معشوق کی صف

    نشے میں مست و ہر یک جام بکف

    گلال ابرق سے سب بھر بھر کے جھولی

    پکارے یک بہ یک ہولی ہے ہولی

    لگی پچکاریوں کی مار ہونے

    ہر اک سوں رنگ کی بوچھار ہونے

    کوئی ہے سانوری کوئی ہے گوری

    کوئی چمپا برن عمروں میں تھوڑی

    مأخذ :
    • کتاب : Hindustan Hamara-1 (Pg. 250)
    • Author : Jan Nisar Akhtar
    • مطبع : B.K. Offset Navin Shahdara Delhi-110032 (2010)
    • اشاعت : 2010

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY