نئی کہانی

سیدہ فرحت

نئی کہانی

سیدہ فرحت

MORE BYسیدہ فرحت

    ہم نہ سنیں گے اب یہ کہانی

    ایک تھا راجہ ایک تھی رانی

    نئی کہانی مجھے سناؤ

    امی ہمارا جی بہلاؤ

    ہم نہ سنیں گے شیر کا قصہ

    آ جاتا ہے ہم کو غصہ

    کیوں کھاتا ہے ہرن ہمارے

    ننھے سے خرگوش بچارے

    ہم تو سنیں گے قصہ ایسا

    ایک ہو لڑکا میرا جیسا

    شیر کو بھی جو مار بھگائے

    راجہ کو خاطر میں نہ لائے

    پار کرے جو سات سمندر

    سیر کرے آکاش پہ جا کر

    پار کرے وہ سات سمندر

    سیر کرے آکاش پہ جا کر

    تارے اس کے ہوں ہمجولی

    چاند سے کھیلے آنکھ مچولی

    بادل میں وہ جھولا جھولے

    چاند ستاروں کو بھی چھو لے

    امی میری اچھی امی

    کہہ دو آج کہانی ایسی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY