چپکے سے

رئیس فروغ

چپکے سے

رئیس فروغ

MORE BYرئیس فروغ

    کل رات کہانی پریوں کی

    باجی نے سنائی چپکے سے

    پھر دھیرے دھیرے ہوا چلی

    اور نندیا آئی چپکے سے

    ہلکے تھے کہیں گہرے تھے کہیں

    رنگوں کی وہ بارش دیکھی تھی

    تھیں جس میں بہت سی تصویریں

    ہم نے وہ نمائش دیکھی تھی

    پھر سب سے چھپا کے ہم نے بھی

    تصویر بنائی چپکے سے

    فرصت جو ملی تو ہم یوں ہی

    کچھ وقت بتانے بیٹھے تھے

    گرمی کے دنوں میں ڈھولک پر

    اک گیت سنانے بیٹھے تھے

    مغرب کی طرف سے اتنے میں

    بدلی بھی گھر آئی چپکے سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY