ہارٹ اٹیک

فیض احمد فیض

ہارٹ اٹیک

فیض احمد فیض

MORE BYفیض احمد فیض

    درد اتنا تھا کہ اس رات دل وحشی نے

    ہر رگ جاں سے الجھنا چاہا

    ہر بن مو سے ٹپکنا چاہا

    اور کہیں دور ترے صحن میں گویا

    پتا پتا مرے افسردہ لہو میں دھل کر

    حسن مہتاب سے آزردہ نظر آنے لگا

    میرے ویرانۂ تن میں گویا

    سارے دکھتے ہوئے ریشوں کی طنابیں کھل کر

    سلسلہ وار پتا دینے لگیں

    رخصت قافلۂ شوق کی تیاری کا

    اور جب یاد کی بجھتی ہوئی شمعوں میں نظر آیا کہیں

    ایک پل آخری لمحہ تری دل داری کا

    درد اتنا تھا کہ اس سے بھی گزرنا چاہا

    ہم نے چاہا بھی مگر دل نہ ٹھہرنا چاہا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ضیا محی الدین

    ضیا محی الدین

    نامعلوم

    نامعلوم

    مأخذ :
    • کتاب : Nuskha Hai Wafa (Pg. 433)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY