دیمک

وحید اختر

دیمک

وحید اختر

MORE BY وحید اختر

    کرم خوردہ کاغذوں کے ڈھیر میں مدفون ہے

    چاٹتا ہے حرف حرف

    دائرے قوسین سن تاریخ اعداد و شمار

    نقطہ و زیر و زبر تشدید و مد

    حاصل بینائی و ذوق نظر

    باندھتا ہے وہم و تخمین و گماں کے کچھ حصار

    چومتا ہے کتبۂ لوح مزار

    چند نقطے اڑ گئے ہیں لفظ کچھ کاواک ہیں

    اس کی نظروں میں خزینہ علم کا خار و خس و خاشاک ہیں

    کیا علائم کیا رموز اشکال الفاظ و حروف

    آتش تغئیر کے ہاتھوں پگھل جاتے ہیں سب

    وقت کی بھٹی میں تپ کر اک نئے سانچے میں ڈھل جاتے ہیں سب

    لمحہ لمحہ منکشف ہوتا ہوا سر حیات

    منجمد الفاظ کے سینے میں اپنا نور پھیلاتا نہیں

    کرم خوردہ کاغذوں کی لاش میں

    خوں اپنا دوڑاتا نہیں

    کرم کاغذ ہے حریف روز و شب

    چاٹتا ہے فضلۂ علم و ادب

    اور سر اکڑائے خلاقان معنی کی طرف خندہ بہ لب

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دیمک نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites