فقیری میں

ساجدہ زیدی

فقیری میں

ساجدہ زیدی

MORE BY ساجدہ زیدی

    فقیری میں بھی خوش وقتی کے

    کچھ سامان فراہم تھے

    خیالوں کے بگولے

    مضطرب جذبوں کے ہنگامے،

    تلاطم بحر ہستی میں

    تموج روح کے بن میں،

    عجب افتاں و خیزاں مرحلے پہنائی شب کے،

    تڑپ غم ہائے ہجراں کی

    لرزتی آرزو دیدار جاناں کی

    عدم آباد کے صحرا میں ایک ذرہ

    کہ مثل قطرۂ سیماب لرزیدہ

    صدف میں ذہن کے جوں

    گوہر کمیاب پوشیدہ

    دل صد پارہ

    جوئے غم

    لرزتی کشتئ احساس

    جہاں بینی کا دل میں عزم دزدیدہ

    فقیری میں یہی اسباب ہستی تھا یہی درد تہہ جام تمنا تھا

    یہی ساماں بچا لیتے تو اچھا تھا

    فقیری میں مگر یہ کون سی افتاد آئی ہے

    کہ ساماں لٹ گیا راہوں میں کاسہ دل کا خالی ہے

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    Faqeeri mein_Nazm عذرا نقوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites