آدمی بلبلہ ہے

گلزار

آدمی بلبلہ ہے

گلزار

MORE BY گلزار

    آدمی بلبلہ ہے پانی کا

    اور پانی کی بہتی سطح پر

    ٹوٹتا بھی ہے ڈوبتا بھی ہے

    پھر ابھرتا ہے، پھر سے بہتا ہے

    نہ سمندر نگل سکا اس کو

    نہ تواریخ توڑ پائی ہے

    وقت کی ہتھیلی پر بہتا

    آدمی بلبلہ ہے پانی کا

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY