اردو زباں

گلزار

اردو زباں

گلزار

MORE BYگلزار

    یہ کیسا عشق ہے اردو زباں کا،

    مزا گھلتا ہے لفظوں کا زباں پر

    کہ جیسے پان میں مہنگا قمام گھلتا ہے

    یہ کیسا عشق ہے اردو زباں کا۔۔۔۔

    نشہ آتا ہے اردو بولنے میں

    گلوری کی طرح ہیں منہ لگی سب اصطلاحیں

    لطف دیتی ہے، حلق چھوتی ہے اردو تو، حلق سے جیسے مے کا گھونٹ اترتا ہے

    بڑی ارسٹوکریسی ہے زباں میں

    فقیری میں نوابی کا مزا دیتی ہے اردو

    اگرچہ معنی کم ہوتے ہے اردو میں

    الفاظ کی افراط ہوتی ہے

    مگر پھر بھی، بلند آواز پڑھیے تو بہت ہی معتبر لگتی ہیں باتیں

    کہیں کچھ دور سے کانوں میں پڑتی ہے اگر اردو

    تو لگتا ہے کہ دن جاڑوں کے ہیں کھڑکی کھلی ہے، دھوپ اندر آ رہی ہے

    عجب ہے یہ زباں، اردو

    کبھی کہیں سفر کرتے اگر کوئی مسافر شعر پڑھ دے میرؔ، غالبؔ کا

    وہ چاہے اجنبی ہو، یہی لگتا ہے وہ میرے وطن کا ہے

    بڑی شائستہ لہجے میں کسی سے اردو سن کر

    کیا نہیں لگتا کہ ایک تہذیب کی آواز ہے, اردو

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY