کنگال

حارث خلیق

کنگال

حارث خلیق

MORE BYحارث خلیق

    تمہیں بھی معلوم ہے مجھے بھی

    کہ پاس میرے تو کچھ نہیں ہے

    جو زر پرستی کے اس جہاں میں

    مجھے بھی کچھ معتبر بنا دے

    نہ قیمتی ہے لباس میرا

    نہ مال و دولت زر و جواہر

    کہ جن میں تم کو شریک کر لوں

    مری تو دولت عجیب سی ہے

    مری متاع جہاں میں تم کو

    بہت سی رسوائیاں ملیں گی

    وفا کے آنسو گماں کی خوشیاں

    جنوں کی دانائیاں ملیں گی

    مٹھاس میں تلخیاں ملیں گی

    قلم کی سچائیاں ملیں گی

    خلوص جذبات کی لگن کی

    اتھاہ گہرائیاں ملیں گی

    مری تو دولت عجیب سی ہے

    اگر کہو تو شریک کر لوں

    تمہیں بھی اپنی متاع دل میں

    کہ پاس میرے تو کچھ نہیں ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Ishq ki taqveem me.n (Pg. 81)
    • Author : HARIS KHALEEQ
    • مطبع : Hoori Nurani, Maktaba Daniyal, Victoria Chaimber 2 (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY