مہاتما گاندھی

نشور واحدی

مہاتما گاندھی

نشور واحدی

MORE BY نشور واحدی

    شب ایشیا کے اندھیرے میں سر راہ جس کی تھی روشنی

    وہ گوہر کسی نے چھپا لیا وہ دیا کسی نے بجھا دیا

    جو شہید ذوق حیات ہو اسے کیوں کہو کہ وہ مر گیا

    اسے یوں ہی رہنے دو حشر تک یہ جنازہ کس نے اٹھا دیا

    تری زندگی بھی چراغ تھی تیری گرم غم بھی چراغ ہے

    کبھی یہ چراغ جلا دیا کبھی وہ چراغ جلا دیا

    جسے زیست سے کوئی پیار تھا اسے زہر سے سروکار تھا

    وہی خاک و خوں میں پڑا ملا جسے درد دل نے مزا دیا

    جسے دشمنی پہ غرور تھا اسے دوستی سے شکست دی

    جو دھڑک رہے تھے الگ الگ انہیں دو دلوں کو ملا دیا

    جو نہ داغ چہرہ مٹا سکے انہیں توڑنا ہی تھا آئنہ

    جو خزانہ لوٹ سکے نہیں اسے رہزنوں نے لٹا دیا

    وہ ہمیشہ کے لئے چپ ہوئے مگر اک جہاں کو زبان دو

    وہ ہمیشہ کے لئے سو گئے مگر اک جہاں کو جگا دیا

    مآخذ:

    • کتاب : Nushoor Wahedi Veyaktitiva Chhaya Aur Shayri (Urdu Poetry) (Pg. 134)
    • Author : Niaz wahedi
    • مطبع : Niaz wahedi (2003)
    • اشاعت : 2003

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY