میرا جی

حبیب جالب

میرا جی

حبیب جالب

MORE BY حبیب جالب

    INTERESTING FACT

    مشہور شاعر میرا جی کی نذر

    گیت کیا کیا لکھ گیا کیا کیا فسانے کہہ گیا

    نام یوں ہی تو نہیں اس کا ادب میں رہ گیا

    ایک تنہائی رہی اس کی انیس زندگی

    کون جانے کیسے کیسے دکھ وہ تنہا سہہ گیا

    سوز میراؔ کا ملا جی کو تو میرا جی بنا

    دل نشیں لکھے سخن اور دھڑکنوں میں رہ گیا

    درد جتنا بھی اسے بے درد دنیا سے ملا

    شاعری میں ڈھل گیا کچھ آنسوؤں میں بہہ گیا

    اک نئی چھب سے جیا وہ اک عجب ڈھب سے جیا

    آنکھ اٹھا کر جس نے دیکھا دیکھتا ہی رہ گیا

    اس سے آگے کوئی بھی جانے نہیں پایا ابھی

    نقش بن کے رہ گیا جو اس کی رو میں بہہ گیا

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat Habeeb Jalib (Pg. 387)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites