نہ دی انگریز نے غالبؔ کو پنشن

محمد یوسف پاپا

نہ دی انگریز نے غالبؔ کو پنشن

محمد یوسف پاپا

MORE BYمحمد یوسف پاپا

    بہت ہوں جان سے بیزار یارو

    ہوئی تعلیم دل پر بار یارو

    مجھے بننا نہیں فن کار یارو

    ثریا سے ہے مجھ کو پیار یارو

    مجھے کرنی ہے دل کی بات منشن

    اٹنشن اے دل ناداں اٹنشن

    ہے بھوتک شاستر میں اک چیز لائٹ

    کریں گر تجربہ جاتی ہے سائٹ

    عجب ہوتی ہے کچھ رنگوں میں فائٹ

    کہ مل کر سات ہو جاتے ہیں وائٹ

    منگاؤ میگنٹ دیکھو ڈٹنشن

    اٹنشن اے دل ناداں اٹنشن

    چلو اب پیریڈ مہندی کا آیا

    کہیں درشن کہیں روپک کی چھایا

    گرو نے سورٹھا جم کر پڑھایا

    ہماری تو سمجھ میں کچھ نہ آیا

    کبیرؔ اور سورؔ میں رہتا ہے ٹنشن

    اٹنشن اے دل ناداں اٹنشن

    ہر اک سائنس کا چھیکا گڑنت ہے

    بڑا دشمن مرے جی کا گڑنت ہے

    تپ دق کا نیا ٹیکا گڑنت ہے

    نمک بالکل نہیں پھیکا گڑنت ہے

    بڑھا جاتا ہے ہر اسٹپ پہ ٹنشن

    اٹنشن اے دل ناداں اٹنشن

    ہے اردو کا بھی لمبا پیر ساقی

    بناتی ہے حرم کو دیر ساقی

    کہیں مومنؔ کا ذکر خیر ساقی

    کہیں ناسخؔ کی حالت غیر ساقی

    نہ دی انگریز نے غالبؔ کو پنشن

    اٹنشن اے دل ناداں اٹنشن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY