نجمہؔ کے لیے ایک نظم

شہریار

نجمہؔ کے لیے ایک نظم

شہریار

MORE BYشہریار

    کیا سوچتی ہو

    دیوار فراموشی سے ادھر کیا دیکھتی ہو

    آئینہ خواب میں آنے والے لمحوں کے منظر دیکھو

    آنگن میں پرانے نیم کے پیڑ کے سائے میں

    بھیو کے جہاز میں بیٹھی ہوئی ننھی چڑیا

    کیوں اڑتی نہیں

    جنگل کی طرف جانے والی وہ ایک اکیلی پگڈنڈی

    کیوں مڑتی نہیں

    ٹوٹی زنجیر صداؤں کی کیوں جڑتی نہیں

    اک سرخ گلاب لگا لو اپنے جوڑے میں

    اور پھر سوچو

    مآخذ
    • کتاب : sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 299)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY