کسان

MORE BYرفعت سروش

    بے آب و گیاہ بانجھ دھرتی

    مجھ سے یہ سوال کر رہی ہے

    اے خالق نغمۂ بہاراں

    صدیوں ہوں میں خزاں رسیدہ

    مفلوج ہیں کب سے میرے اعضا

    تم میرا علاج ہیں کب سے میرے اعضا

    تم میرا علاج کر سکو گے

    میں چپ ہوں خموش ہوں کہوں کیا

    شاعر ہوں میں لفظوں کا مسیحا

    اے کاش میں اک کسان ہوتا

    اس دھرتی کے منجمد لہو کو

    بے ہوشی کی نیند سے جگاتا

    محنت سے نئے چمن کھلاتا

    مٹی کو نئی دلہن بناتا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے