قید حیات و بند غم

شاذ تمکنت

قید حیات و بند غم

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    آخر شب کی اداسی نم فضاؤں کا سکوت

    زخم سے مہتاب کے رستا ہے کرنوں کا لہو

    دل کی وادی پر ہے بے موسم گھٹاؤں کا سکوت

    کاش کوئی غم گسار آئے مداراتیں کرے

    موم بتی کی پگھلتی روشنی کے کرب میں

    دکھ بھرے نغمے سنائے دکھ بھری باتیں کرے

    کوئی افسانہ کسی ٹوٹی ہوئی مضراب کا

    فصل گل میں رائیگاں عرض ہنر جانے کی بات

    سیپ کے پہلو سے موتی کے جدا ہونے کا ذکر

    موج کی، ساحل سے ٹکرا کر بکھر جانے کی بات

    دیدۂ پر خوں سے کاسہ تک کی منزل کا بیاں

    زندگانی میں ہزاروں بار مر جانے کی بات

    عدل گاہ خیر میں پا سنگ شر کا تذکرہ

    آئینہ خانے میں خال و خط سے ڈر جانے کی بات

    کاش کوئی غم گسار آئے مداراتیں کرے

    موم بتی کی پگھلتی روشنی کے کرب میں

    دکھ بھرے نغمے سنائے دکھ بھری باتیں کرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY