رتجگا

شاذ تمکنت

رتجگا

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    اندھیری رات ہوا تیز برشگال کا شور

    کروں تو کیسے کروں شمع کی نگہبانی

    ان آندھیوں میں کف دست کا سہارا کیا

    کہاں چلے گئے تم سونپ کر یہ دولت نور

    مری حیات تو جگنو کی روشنی میں کٹی

    نہ آفتاب سے نسبت نہ ماہتاب رفیق

    جنم جنم کی سیاہی برس برس کی یہ رات

    قدم قدم کا اندھیرا نفس نفس کی یہ رات

    تمہاری نکہت برباد کو ترستی ہے

    اب آؤ آ کے امانت سنبھال لو اپنی

    تمام عمر کا یہ رتجگا تمام ہوا

    میں تھک گیا ہوں مجھے نیند آئی جاتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Nai Nazm ka safar (Pg. 170)
    • Author : Khalilur Rahman Azmi
    • مطبع : NCPUL, New Delhi (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY