ساز سخن بہانہ ہے

ادا جعفری

ساز سخن بہانہ ہے

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    غبار صبح و شام میں

    تجھے تو کیا

    میں اپنا عکس دیکھ لوں میں اپنا اسم سوچ لوں

    نہیں مری مجال بھی

    کہ لڑکھڑا کے رہ گیا مرا ہر اک سوال بھی

    مرا ہر اک خیال بھی

    میں بھی بے قرار و خستہ تن

    بس اک شرار عشق میرا پیرہن

    مرا نصیب ایک حرف آرزو

    وہ ایک حرف آرزو

    تمام عمر سو طرح لکھوں

    مرا وجود اک نگاہ بے سکوں

    نگاہ جس کے پاؤں میں ہیں بیڑیاں پڑی ہوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY