شور تھمنے کے بعد

شمس الرحمن فاروقی

شور تھمنے کے بعد

شمس الرحمن فاروقی

MORE BYشمس الرحمن فاروقی

    اب شور تھما تو میں نے جانا

    آدھی کے قریب رو چکی ہے

    شب گرد کو اشک دھو چکی ہے

    چادر کالی خلا کی مجھ پر

    بھاری ہے مثل موت شہپر

    ہے سانس کو رکنے کا بہانہ

    تسبیح سے ٹوٹتا ہے دانہ

    میں نقطہ حقیر آسمانی

    بے فصل ہے بے زماں ہے تو بھی

    کہتی ہے یہ فلسفہ طرازی

    لیکن یہ سنسناتی وسعت

    اتنی بے حرف و بے مروت

    آمادۂ حرب لازمانی

    دشمن کی اجنبی نشانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY