سرخ گلاب اور بدر منیر

ساقی فاروقی

سرخ گلاب اور بدر منیر

ساقی فاروقی

MORE BYساقی فاروقی

    اے دل پہلے بھی تنہا تھے، اے دل ہم تنہا آج بھی ہیں

    اور ان زخموں اور داغوں سے اب اپنی باتیں ہوتی ہیں

    جو زخم کہ سرخ گلاب ہوئے، جو داغ کہ بدر منیر ہوئے

    اس طرح سے کب تک جینا ہے، میں ہار گیا اس جینے سے

    کوئی ابر اڑے کسی قلزم سے رس برسے مرے ویرانے پر

    کوئی جاگتا ہو کوئی کڑھتا ہو مرے دیر سے واپس آنے پر

    کوئی سانس بھرے مرے پہلو میں کوئی ہاتھ دھرے مرے شانے پر

    اور دبے دبے لہجے میں کہے تم نے اب تک بڑے درد سہے

    تم تنہا تنہا جلتے رہے تم تنہا تنہا چلتے رہے

    سنو تنہا چلنا کھیل نہیں، چلو آؤ مرے ہمراہ چلو

    چلو نئے سفر پر چلتے ہیں، چلو مجھے بنا کے گواہ چلو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سرخ گلاب اور بدر منیر نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY