اردو

MORE BYعلی سردار جعفری

    ہماری پیاری زبان اردو

    ہماری نغموں کی جان اردو

    حسین دل کش جوان اردو

    زبان وہ دھل کے جس کو گنگا کے جل سے پاکیزگی ملی ہے

    اودھ کی ٹھنڈی ہوا کے جھونکے سے جس کے دل کی کلی کھلی ہے

    جو شعر و نغمہ کے خلد زاروں میں آج کوئل سی کوکتی ہے

    اسی زباں میں ہمارے بچپن نے ماؤں سے لوریاں سنی ہیں

    جوان ہو کر اسی زباں میں کہانیاں عشق نے کہی ہیں

    اسی زباں کو چمکتے ہیروں سے علم کی جھولیاں بھری ہیں

    اسی زباں سے وطن کے ہونٹوں نے نعرۂ انقلاب پایا

    اسی سے انگریز حکمرانوں نے خود سری کا جواب پایا

    اسی سے میری جواں تمنا نے شاعری کا رباب پایا

    یہ اپنے نغمات پر اثر سے دلوں کو بیدار کر چکی ہے

    یہ اپنے نعروں کی فوج سے دشمنوں پہ یلغار کر چکی ہے

    ستم گروں کی ستم گری پر ہزارہا وار کر چکی ہے

    کوئی بتاؤ وہ کون سا موڑ ہے جہاں ہم جھجک گئے ہیں

    وہ کون سی رزم گاہ ہے جس میں اہل اردو دبک گئے ہیں

    وہ ہم نہیں ہیں جو بڑھ کے میداں میں آئے ہوں اور ٹھٹھک گئے ہیں

    یہ وہ زباں ہے کہ جس نے زنداں کی تیرگی میں دئیے جلائے

    یہ وہ زباں ہے کہ جس کے شعلوں سے جل گئے پھانسیوں کے سائے

    فراز دار و رسن سے بھی ہم نے سرفروشی کے گیت گائے

    کہا ہے کس نے ہم اپنے پیارے وطن میں بھی بے وطن رہیں گے

    زبان چھن جائے گی ہمارے دہن سے ہم بے سخن رہیں گے

    ہم آج بھی کل کی طرح دل کے ستار پر نغمہ زن رہیں گے

    یہ کیسی باد بہار ہے جس میں شاخ اردو نہ پھل سکے گی

    وہ کیسا روئے نگار ہوگا نہ زلف جس پر مچل سکے گی

    ہمیں وہ آزادی چاہیئے جس میں دل کی مینا ابل سکے گی

    ہمیں یہ حق ہے ہم اپنی خاک وطن میں اپنا چمن سجائیں

    ہماری ہے شاخ گل تو پھر کیوں نہ اس پہ ہم آشیاں بنائیں

    ہم اپنے انداز اور اپنی زباں میں اپنے گیت گائیں

    کہاں ہو متوالو آؤ بزم وطن میں ہے امتحاں ہمارا

    زبان کی زندگی سے وابستہ آج سود و زیاں ہمارا

    ہماری اردو رہے گی باقی اگر ہے ہندوستاں ہمارا

    چلے ہیں گنگ و جمن کی وادی میں ہم ہوائے بہار بن کر

    ہمالیہ سے اتر رہے ہیں ترانۂ آبشار بن کر

    رواں ہیں ہندوستاں کی رگ رگ میں خون کی سرخ دھار بن کر

    ہماری پیاری زبان اردو

    ہماری نغموں کی جان اردو

    حسین، دل کش جوان اردو

    مآخذ:

    • کتاب : Ek Khvab aur (Pg. 122)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY