آج کی رات نہ جا

مخدومؔ محی الدین

آج کی رات نہ جا

مخدومؔ محی الدین

MORE BYمخدومؔ محی الدین

    رات آئی ہے بہت راتوں کے بعد آئی ہے

    دیر سے دور سے آئی ہے مگر آئی ہے

    مرمریں صبح کے ہاتھوں میں چھلکتا ہوا جام آئے گا

    رات ٹوٹے گی اجالوں کا پیام آئے گا

    آج کی رات نہ جا

    زندگی لطف بھی ہے زندگی آزار بھی ہے

    ساز و آہنگ بھی زنجیر کی جھنکار بھی ہے

    زندگی دید بھی ہے حسرت دیدار بھی ہے

    زہر بھی آب حیات لب و رخسار بھی ہے

    زندگی خار بھی ہے زندگی دار بھی ہے

    آج کی رات نہ جا

    آج کی رات بہت راتوں کے بعد آئی ہے

    کتنی فرخندہ ہے شب کتنی مبارک ہے سحر

    وقف ہے میرے لیے تیری محبت کی نظر

    آج کی رات نہ جا

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Makhdum Muhi-ud-din (Pg. 176)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY