چپ نہ رہو

MORE BYمخدومؔ محی الدین

    شب کی تاریکی میں اک اور ستارہ ٹوٹا

    طوق توڑے گئے ٹوٹی زنجیر

    جگمگانے لگا ترشے ہوے ہیرے کی طرح

    آدمیت کا ضمیر

    پھر اندھیرے میں کسی ہاتھ میں خنجر چمکا

    شب کے سناٹے میں پھر خون کے دریا چمکے

    صبح دم جب مرے دروازے سے گزری ہے صبا

    اپنے چہرے پہ ملے خون سحر گزری ہے

    خیر ہو مجلس اقوام کی سلطانی کی

    خیر ہو حق کی صداقت کی جہاں بانی کی

    اور اونچی ہوئی صحرا میں امیدوں کی صلیب

    اور اک قطرۂ خوں چشم سحر سے ٹپکا

    جب تلک دہر میں قاتل کا نشاں باقی ہے

    تم مٹاتے ہی چلے جاؤ نشاں قاتل کے

    روز ہو جشن شہیدان وفا چپ نہ رہو

    بار بار آتی ہے مقتل سے صدا چپ نہ رہو

    چپ نہ رہو!

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY