انقلاب

MORE BYمخدومؔ محی الدین

    اے جان نغمہ جہاں سوگوار کب سے ہے

    ترے لیے یہ زمیں بے قرار کب سے ہے

    ہجوم شوق سر رہ گزار کب سے ہے

    گزر بھی جا کہ ترا انتظار کب سے ہے

    نہ تابناکیٔ رخ ہے نہ کاکلوں کا ہجوم

    ہے ذرہ ذرہ پریشاں کلی کلی مغموم

    ہے کل جہاں متعفن ہوائیں سب مسموم

    گزر بھی جا کہ ترا انتظار کب سے ہے

    رخ حیات پہ کاکل کی برہمی ہی نہیں

    نگار دہر میں انداز مریمی ہی نہیں

    مسیح و خضر کی کہنے کو کچھ کمی ہی نہیں

    گزر بھی جا کہ ترا انتظار کب سے ہے

    حیات بخش ترانے اسیر ہیں کب سے

    گلوئے زہرہ میں پیوست تیر ہیں کب سے ہے

    قفس میں بند ترے ہم صفیر ہیں کب سے

    گزر بھی جا کہ ترا انتظار کب سے ہے

    حرم کے دوش پہ عقبیٰ کا دام ہے اب تک

    سروں میں دین کا سودائے خام ہے اب تک

    توہمات کا آدم غلام ہے اب تک

    گزر بھی جا کہ ترا انتظار کب سے ہے

    ابھی دماغ پہ قحبائے سیم و زر ہے سوار

    ابھی رکی ہی نہیں تیشہ زن کے خون کی دھار

    شمیم عدل سے مہکیں یہ کوچہ و بازار

    گزر بھی جا کہ ترا انتظار کب سے ہے

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY