زنجیر کی چیخ

شاذ تمکنت

زنجیر کی چیخ

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    سمندر تجھے چھوڑ کر جا رہا ہوں

    تو یہ مت سمجھنا

    کہ میں تیری موجوں کی زنجیر کی چیخ سے بے خبر ہوں

    یہی میں نے سوچا ہے اپنی زمیں کو

    افق سے پرے یوں بچھا دوں

    حداین و ں تک اٹھا دوں

    وہ تو ہو کہ میں

    اپنی وسعت میں لا انتہا ہیں

    مگر ہم کناروں کے مارے ہوئے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY