Ameeta Parsuram Meeta's Photo'

امیتا پرسو رام میتا

1955 | دلی, ہندوستان

236
Favorite

باعتبار

زندگی اپنا سفر طے تو کرے گی لیکن

ہم سفر آپ جو ہوتے تو مزا اور ہی تھا

کون تھا میرے علاوہ اس کا

اس نے ڈھونڈے تھے ٹھکانے کیا کیا

تجھی سے گفتگو ہر دم تری ہی جستجو ہر دم

مری آسانیاں تجھ سے مری مشکل ہے تو ہی تو

صبح روشن کو اندھیروں سے بھری شام نہ دے

دل کے رشتے کو مری جان کوئی نام نہ دے

کچھ تو احساس محبت سے ہوئیں نم آنکھیں

کچھ تری یاد کے بادل بھی بھگو جاتے ہیں

نہ ہوں خواہشیں نہ گلا کوئی نہ جفا کوئی

نہ سوال عہد وفا کا ہو وہی عشق ہے

ہم نے ہزار فاصلے جی کر تمام شب

اک مختصر سی رات کو مدت بنا دیا

دو کناروں کو ملایا تھا فقط لہروں نے

ہم اگر اس کے نہ تھے وہ بھی ہمارا کب تھا

وہی چرچے وہی قصے ملی رسوائیاں ہم کو

انہی قصوں سے وہ مشہور ہو جائے تو کیا کیجے

کوئی تدبیر نہ تقدیر سے لینا دینا

بس یوں ہی فیصلے جو ہونے ہیں ہو جاتے ہیں

تیرا انداز نرالا سب سے

تیر تو ایک نشانے کیا کیا