Begum Akhtar's Photo'

بیگم اختر

1929 - 1974 | کولکاتا, ہندوستان

ویڈیو 61

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
مزاح

بیگم اختر

Dil ki baat kahi nahin jaati

بیگم اختر

Door hai manzil raahe mushkil

بیگم اختر

Itna to zindagi mein kisi ki khalal pade

بیگم اختر

Jab Bhi Nazm-e-Maikada badla

بیگم اختر

Jab bhi nazm-e-maikada badla a gaya

بیگم اختر

khayal-e-qaaba-o-taibaa kis trah bhulu

بیگم اختر

Khush hu ke mera husn-e-talab kaam to aayaa

بیگم اختر

Khushi ne mujhko thukraya

بیگم اختر

Na poochh mere naale hain dard bhare

بیگم اختر

Na socha na samjha na seekha na janaa

بیگم اختر

raah-e-aashiqi Ke mare

بیگم اختر

Rasm-e-ulfat sikha gaya koi

بیگم اختر

SAHN-E-HARAM KU-E-SANAM CHORD DIYA HAI

بیگم اختر

Saqiya Chod Na Khali Mere Paimane ko

بیگم اختر

ye maikhana hai bazm-e-jam nahi hai

بیگم اختر

Zameen pe reh ke dimaag

بیگم اختر

phir mujhe dida-e-tar yaad aaya

بیگم اختر

اب چھلکتے ہوئے ساغر نہیں دیکھے جاتے

بیگم اختر

اتنا تو زندگی میں کسی کے خلل پڑے

بیگم اختر

اس درجہ بد_گماں ہیں خلوص_بشر سے ہم

بیگم اختر

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا

بیگم اختر

اے محبت ترے انجام پہ رونا آیا

بیگم اختر

تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوق_نظر ملے

بیگم اختر

جھنجھلائے ہیں لجائے ہیں پھر مسکرائے ہیں

بیگم اختر

حسن غمزے کی کشاکش سے چھٹا میرے بعد

بیگم اختر

خوش ہوں کہ مرا حسن_طلب کام تو آیا

بیگم اختر

خوشی نے مجھ کو ٹھکرایا ہے درد_و_غم نے پالا ہے

بیگم اختر

خوشی نے مجھ کو ٹھکرایا ہے درد_و_غم نے پالا ہے

بیگم اختر

دائم پڑا ہوا ترے در پر نہیں ہوں میں

بیگم اختر

درد منت_کش_دوا نہ ہوا

بیگم اختر

دل کی بات کہی نہیں جاتی چپکے رہنا ٹھانا ہے

بیگم اختر

دیوانہ بنانا ہے تو دیوانہ بنا دے

بیگم اختر

ذکر اس پری_وش کا اور پھر بیاں اپنا

بیگم اختر

زندگی کا درد لے کر انقلاب آیا تو کیا

بیگم اختر

ساز یہ کینہ_ساز کیا جانیں

بیگم اختر

سر میں سودا بھی نہیں دل میں تمنا بھی نہیں

بیگم اختر

سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا

بیگم اختر

شام_فراق اب نہ پوچھ آئی اور آ کے ٹل گئی

بیگم اختر

صبح کے درد کو راتوں کی جلن کو بھولیں

بیگم اختر

طبیعت ان دنوں بیگانۂ_غم ہوتی جاتی ہے

بیگم اختر

عذر آنے میں بھی ہے اور بلاتے بھی نہیں

بیگم اختر

عشق میں غیرت_جذبات نے رونے نہ دیا

بیگم اختر

قرض_نگاہ_یار ادا کر چکے ہیں ہم

بیگم اختر

گل پھینکے ہے اوروں کی طرف بلکہ ثمر بھی

بیگم اختر

لائی حیات آئے قضا لے چلی چلے

بیگم اختر

مرے نصیب نے جب مجھ سے انتقام لیا

بیگم اختر

میرے چہرے سے غم آشکارا نہیں

بیگم اختر

میرے ہم_نفس میرے ہم_نوا مجھے دوست بن کے دغا نہ دے

بیگم اختر

میں ڈھونڈتا ہوں جسے وہ جہاں نہیں ملتا

بیگم اختر

نہ سنو میرے نالے ہیں درد_بھرے دار_و_اثرے آہ_سحرے

بیگم اختر

وہ ادائے_دلبری ہو کہ نوائے_عاشقانہ

بیگم اختر

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

بیگم اختر

کچھ تو دنیا کی عنایات نے دل توڑ دیا

بیگم اختر

کوئی امید بر نہیں آتی

بیگم اختر

کوئی یہ کہہ دے گلشن گلشن

بیگم اختر

ہم کو مٹا سکے یہ زمانے میں دم نہیں

بیگم اختر

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال_یار ہوتا

بیگم اختر

دل ہی تو ہے نہ سنگ_و_خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں

بیگم اختر

آہ کو چاہیے اک عمر اثر ہوتے تک

بیگم اختر

"کولکاتا" کے مزید شعرا

  • شگفتہ یاسمین شگفتہ یاسمین
  • شہناز نبی شہناز نبی
  • منی بائی حجاب منی بائی حجاب
  • حرمت الااکرام حرمت الااکرام
  • ناظم سلطانپوری ناظم سلطانپوری
  • صادق القادری صادق القادری
  • مضطر حیدری مضطر حیدری
  • شہود عالم آفاقی شہود عالم آفاقی
  • جعفر ساہنی جعفر ساہنی
  • یوسف تقی یوسف تقی