noImage

حقیر

غزل 10

اشعار 22

ٹوٹیں وہ سر جس میں تیری زلف کا سودا نہیں

پھوٹیں وہ آنکھیں کہ جن کو دید کا لپکا نہیں

  • شیئر کیجیے

یا اس سے جواب خط لانا یا قاصد اتنا کہہ دینا

بچنے کا نہیں بیمار ترا ارشاد اگر کچھ بھی نہ ہوا

عشق کے پھندے سے بچئے اے حقیرؔ خستہ دل

اس کا ہے آغاز شیریں اور ہے انجام تلخ

ای- کتاب 2

چمنستان فصاحت

 

1940

دیوان حقیر

 

 

 

Added to your favorites

Removed from your favorites