Sudarshan Faakhir's Photo'

سدرشن فاخر

1934 - 2008 | جالندھر, ہندوستان

سدرشن کامرا ، کئی فلموں کے لئے گیت لکھے

سدرشن کامرا ، کئی فلموں کے لئے گیت لکھے

سامنے ہے جو اسے لوگ برا کہتے ہیں

جس کو دیکھا ہی نہیں اس کو خدا کہتے ہیں

عشق ہے عشق یہ مذاق نہیں

چند لمحوں میں فیصلہ نہ کرو

love is love, no joke at all

Rashly, do not make a call

love is love, no joke at all

Rashly, do not make a call

دیکھنے والو تبسم کو کرم مت سمجھو

انہیں تو دیکھنے والوں پہ ہنسی آتی ہے

do not deem her smile to be a sign of grace

she mocks those poor souls who've looked upon her face

do not deem her smile to be a sign of grace

she mocks those poor souls who've looked upon her face

ہم تو سمجھے تھے کہ برسات میں برسے گی شراب

آئی برسات تو برسات نے دل توڑ دیا

showers of wine, I did think, would come with rainy clime

but alas when it did rain my heart broke one more time

showers of wine, I did think, would come with rainy clime

but alas when it did rain my heart broke one more time

میرا قاتل ہی میرا منصف ہے

کیا مرے حق میں فیصلہ دے گا

my killer is himself my judge upon this day

how then will he decide in my favour pray?

my killer is himself my judge upon this day

how then will he decide in my favour pray?

عاشقی ہو کہ بندگی فاخرؔ

بے دلی سے تو ابتدا نہ کرو

worship, love whatever be

begin it not half-heartedly

worship, love whatever be

begin it not half-heartedly

میرے دکھ کی کوئی دوا نہ کرو

مجھ کو مجھ سے ابھی جدا نہ کرو

my sorrows no one should allay

keep not me from my self away

my sorrows no one should allay

keep not me from my self away

تیری آنکھوں میں ہم نے کیا دیکھا

کبھی قاتل کبھی خدا دیکھا

یہ سکھایا ہے دوستی نے ہمیں

دوست بن کر کبھی وفا نہ کرو

friendship has taught this to me

in friendship don’t bear loyalty

friendship has taught this to me

in friendship don’t bear loyalty

میرے رکتے ہی مری سانسیں بھی رک جائیں گی

فاصلے اور بڑھا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

ہم سے پوچھو نہ دوستی کا صلا

دشمنوں کا بھی دل ہلا دے گا

تیرے جانے میں اور آنے میں

ہم نے صدیوں کا فاصلہ دیکھا

دل تو روتا رہے اور آنکھ سے آنسو نہ بہے

عشق کی ایسی روایات نے دل توڑ دیا

no tears were permissible though weeping be the heart

in love's domain such cruel customs tore my heart apart

no tears were permissible though weeping be the heart

in love's domain such cruel customs tore my heart apart

ذکر جب ہوگا محبت میں تباہی کا کہیں

یاد ہم آئیں گے دنیا کو حوالوں کی طرح

ہر طرف زیست کی راہوں میں کڑی دھوپ ہے دوست

بس تری یاد کے سائے ہیں پناہوں کی طرح