در مدح حضرت امام حسینؓ

میر تقی میر

در مدح حضرت امام حسینؓ

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    فلک کے جور و جفا نے کیا ہے مجھ کو شکار

    ہزار کوس پہ ہے جاے اک تپیدن وار

    خراب کوہ و بیابان بیکسی ہوں میں

    بہ رنگ صوت جرس ہر طرف ہے میرا گذار

    بغیر خوردن خوں کب نہار ٹوٹے ہے

    سواے گریۂ صبح اب کہاں ہے آب خمار

    لگیں نہ داغ سو کیوں پھیکے میرے سینے پر

    نمک نہیں نظر آتا بجز رخ دلدار

    سو وہ بھی دیکھنا ملتا نہیں ہے گھر بیٹھے

    مگر ہوں ہند میں رسواے کوچہ و بازار

    سواے نالۂ جاں سوز کون ہے دل سوز

    بغیر آہ سحرگاہ کون ہے غم خوار

    جنوں میں جب سے خوش آیا لباس عریانی

    نہیں ہے دامن صحرا میں تب سے مجھ کو قرار

    ہمیشہ ساتھ ہے دامن سوار لڑکوں کے

    مگرکہ خاک وفا سے بنا ہے میرا غبار

    عجب ہے مجھ کو جو تو دیکھنے نہیں آتا

    رہا ہوں ایک تری انکھڑیوں کا میں بیمار

    مطلع ثانی

    ہوا ہوں جور فلک سے نپٹ ہی زار و نزار

    پہنچیو یا خلف الصدق حیدر کرار

    شہا غلام کو تیرے یہ زور بازو ہے

    کہ وقت جنگ جو لے کر کماں کو ہووے سوار

    اگر پہاڑ ہو دشمن تو اس کے سینے میں

    کماں سے چھوٹتے ہی تیر بند ہو سوفار

    لگاوے پھر وہیں دوچار ایسی پے درپے

    کہ ایک کا ہو نشاں دوسرے کی جاے قرار

    کرے ہے فخر بہت اوج پر فلک شاہا

    رضا جو ہو تو کروں تیرے روضے کا بستار

    کہ انفعال ہو لاف و گزاف سے اس کو

    زمیں ہے صحن کی جس کے یہ گنبد دوار

    کرے ہے جوہر اول نگاہ جس ساعت

    تو ایک ہاتھ سے تھانبے ہے سر اپر دستار

    امام ہر دوجہاں جس کی آستاں کی خاک

    رکھے ہے رتبۂ کحل جواہر الابصار

    زہے وہ روضہ جہاں دیدۂ ملک ہیں فرش

    قدم کو رکھتے ہوئے ان پہ آتے ہیں زوار

    اگر طلوع ہو خورشید سامنے اس کے

    ہر ایک ذرے کو واں کے ہے یہ لب گفتار

    کوئی کہے کہ یہ کیا شوخ چشم شپر ہے

    کوئی کہے کہ یہ ہے موش کور ناہموار

    لیا ہے روز سیہ نے بہت اسے گھبرا

    چلی ہے چھوڑ کے حیراں ہو رخنۂ دیوار

    شعاع روضے کے قبے کی ہے گی عالمگیر

    پھرے گا سایۂ شب اب جہاں میں ہوتا خوار

    بہ صانعے کہ یہ نقاشیاں ہیں سب اس کی

    زمیں ہو یا ہو فلک یا حجر ہوں یا اشجار

    بہ احمدےؐ کہ نبوت ہوئی ہے اس پر ختم

    بہ فاطمہؓ کہ وہ ہے بنت سید مختار

    بہ مرتضےٰؓ کہ ولایت مسخر ان نے کی

    بہادری ہے غلاموں کی جس کے فن و شعار

    بہ آں امام کہ کشتہ ہے زہر قاتل کا

    گرے ہیں لخت دل اس کے زمیں پہ کٹ کے ہزار

    بہ آں شہید کہ تشنہ لب و شکستہ دل

    موا ہے دشت بلا میں ہیں اب تلک آثار

    کہ جب ہلال محرم نمود ہوتا ہے

    جہاں میں کرتے قیامت ہیں اس کے ماتم دار

    بہ سینہ سوزی داغ و بہ آتش ہجراں

    بہ آہ سرد سحرگاہی و بہ نالۂ زار

    بہ سردمہری شیریں بہ کینۂ خسرو

    بہ گرم جوشی فرہاد و سختی کہسار

    بہ عشق دیر بہ طوف حرم بہ سعی تمام

    بہ لوح مشہد عاشق بہ سوز شمع مزار

    بہ آب و رنگ گلستاں بہ بیکسی اسیر

    کہ اس کو کنج قفس میں رہے ہے باد بہار

    بہ ساغر مئے گلگوں بہ توبۂ سنگیں

    بہ دل نوازی ساقی بہ ابر دریابار

    بہ دستگیری چاک و بہ بے قراری جیب

    بہ سینہ کاوی دشنہ بہ زخم دامن دار

    بہ حیرت رخ جاناں بہ چشم واماندہ

    بہ سعی باطل ناخن بہ عقدۂ دل کار

    بہ قلقل و بہ سبو و بہ لغزش ہر دم

    بہ مستی مئے ناب و بہ خاطر ہشیار

    بہ پوچ گوئی و بے تابی و بہ بے خوابی

    بہ کم زبانی صبر و بہ دیدۂ بیدار

    بہ دیر و برہمن و کفر و یاصنم گوئی

    بہ شیخ و مسجد و تسبیح و رشتۂ زنار

    بہ سیل خانہ خراب و بہ وادی مجنوں

    بہ جرگہ جرگہ غزالاں بہ دیدۂ خونبار

    بہ خوشہ خوشہ سرشک و بہ داربست مژہ

    بہ قطرہ قطرہ شراب و بہ جام دست یار

    بہ ضعف جسم نزار و بہ طاقت سرکش

    بہ جان عاشق مسکیں کہ یار پر ہے نثار

    بہ خاک عاشق بے خانماں کہ باد صبا

    نہیں دکھاتی اسے بعد مرگ کوچۂ یار

    بہ اضطراب چراغ و بہ دشمنی نسیم

    بہ خاطر دم آخر کہ اس سے ہے بیزار

    بہ دور گردی رنگ قبول و یاس دعا

    بہ اعتزاز اجابت بہ حلقۂ اذکار

    بہ خیل خیل خرابی بہ گوشۂ صحرا

    بہ خوش سوادی شہر و بہ قریہ و بہ دیار

    بہ شوق وصل نگار و بہ جان مایوسی

    بہ آرزوے ہم آغوشی و بہ بخت کنار

    بہ سینہ کوبی زخم جگر بہ ماتم میرؔ

    بہ جاں کنی گلوگیر و حسرت دیدار

    قسم ہے میرے تئیں ان تمام قسموں کی

    کہ تجھ کو علم ہے ان سب کا کیا کروں میں شمار

    یہ آرزو ہے مرے دل میں مدتوں سے شہا

    رہے نہ بعد مرے ہند میں یہ مشت غبار

    اڑا دے اس کو صبا یاں تلک کہ لے پہنچے

    تجھ آستان کے آگے کہ ہے فلک کردار

    رہے ہمیشہ ترے دوستوں کے ساتھ اقبال

    عدو کو تیرے نہ دے فرصت ایک دم ادبار

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyat-e-miir-Vol 2

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY