نصرت الملک بہادر مجھے بتلا کہ مجھے

مرزا غالب

نصرت الملک بہادر مجھے بتلا کہ مجھے

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۵۵ء

    نصرت الملک بہادر مجھے بتلا کہ مجھے

    تجھ سے جو اتنی ارادت ہے تو کس بات سے ہے

    گرچہ تو وہ ہے کہ ہنگامہ اگر گرم کرے

    رونق بزم مہ مہر تری ذات سے ہے

    اور میں وہ ہوں کہ گر جی میں کبھی غور کروں

    غیر کیا خود مجھے نفرت مری اوقات سے ہے

    خستگی کا ہو بھلا جس کے سبب سے سر دست

    نسبت اک گونہ مرے دل کو ترے ہات سے ہے

    ہاتھ میں تیرے رہے تو سن دولت کی عناں

    یہ دعا شام و سحر قاضی حاجات سے ہے

    تو سکندر ہے مرا فخر ہے ملنا تیرا

    گو شرف خضر کی بھی مجھ کو ملاقات سے ہے

    اس پہ گزرے نہ گماں ریوو ریا کا زنہار

    غالبؔ خاک نشیں اہل خرابات سے ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib (Pg. 454)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY