اے شہنشاہ فلک منظر بے مثل و نظیر

مرزا غالب

اے شہنشاہ فلک منظر بے مثل و نظیر

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۴۷

    اے شہنشاہ فلک منظر بے مثل و نظیر

    اے جہاندار کرم شیوۂ بے شبہ و عدیل

    پانو س تیرے ملے فرق ارادت اورنگ

    فرق سے تیرے کرے کسب سعادت اکلیل

    تیرا انداز سخن شانۂ زلف الہام

    تیری رفتار قلم جنبش بال جبریل

    تجھ سے عالم پہ کھلا رابطۂ قرب کلیم

    تجھ سے دنیا میں بچھا مائدہ بذل خلیل

    بہ سخن اوج وہ مرتبۂ معنی و لفظ

    بہ کرم داغ نہ ناصیۂ قلزم و نیل

    تاترے وقت میں ہو عیش و طرب کی توفیر

    تاترے عہد میں ہو رنج و الم کی تقلیل

    ماہ نے چھوڑ دیا ثور سے جانا باہر

    زہرہ نے ترک کیا حوت سے کرنا تحویل

    تیری دانش مری اصلاح مفاسد کی رہین

    تیری بخشش مرے انجاح مقاصد کی کفیل

    تیرا اقبال ترحم مرے جینے کی نوید

    تیرا انداز تغافل مرے مرنے کی دلیل

    بخت ناساز نے چاہا کہ نہ دے مجھ کو اماں

    چرخ کج باز نے چاہا کہ کرے مجھ کو ذلیل

    پیچھے ڈالی ہے سر رشتۂ اوقات میں گانٹھ

    پہلے ٹھونکی ہے بن ناخن تدبیر میں کیل

    تپش دل نہیں بے رابطۂ خوف عظیم

    کشش دم نہیں بے ضابطۂ جر ثقیل

    در معنی سے مرا صفحہ لقا کی داڑھی

    غم گیتی سے مرا سینہ عمر کی زنبیل

    فکر میری گہر اندوز اشارات کثیر

    کلک میری رقم آموز عبارات قلیل

    میرے ابہام پہ ہوتی ہے تصدق توضیح

    میرے اجمال سے کرتی ہے تراوش تفصیل

    نیک ہوتی مری حالت تو نہ دیتا تکلیف

    جمع ہوتی مری خاطر تو نہ کرتا تعجیل

    قبلۂ کون و مکاں خستہ نوازی میں یہ دیر

    کعبۂ امن و اماں عقدہ کشائی میں یہ ڈھیل

    مآخذ:

    • کتاب : Deewan-e-Ghalib (Pg. 395)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY