اچھا جو برا آپ نے چاہا نہ کسی کا

فضل حسین صابر

اچھا جو برا آپ نے چاہا نہ کسی کا

فضل حسین صابر

MORE BY فضل حسین صابر

    اچھا جو برا آپ نے چاہا نہ کسی کا

    دیوانہ کیوں نہ ہو دل فرزانہ کسی کا

    مانا کہ ہے اس شوخ سے یارانہ کسی کا

    دم بھرتا ہے پھر کیوں دل دیوانہ کسی کا

    لو اس کی فقط شمع رسالت سے لگی ہے

    مشتاق نہیں بزم میں پروانہ کسی کا

    آتے نہیں اس رشک سے وہ خانۂ دل میں

    آباد نہ ہو جائے یہ ویرانہ کسی کا

    اے دل ہے عبث اس سے تمنائے ملاقات

    وہ شوخ نہ ہوگا کبھی اپنا نہ کسی کا

    ان کے در دنداں کے تصور میں شب ہجر

    ہر اشک دم گریہ ہے دردانہ کسی کا

    جانے سے ترے آئے مرے دل میں غم و رنج

    پہلے تو سوا تیرے گزر تھا نہ کسی کا

    ہرگز نہ سنے وہ گل و بلبل کی کہانی

    ہو گوش زد اس کے اگر افسانہ کسی کا

    بولے وہ ہجو غم و حسرت کو جو دیکھا

    کیوں اس میں رہیں ہم کہ ہے کاشانہ کسی کا

    کچھ دور نہیں منزل مقصود یہاں سے

    دے ساتھ اگر ہمت مردانہ کسی کا

    آپس میں جھگڑتے ہیں اگر شیخ و برہمن

    مسجد ہی کسی کی ہے نہ بت خانہ کسی کا

    پھر گلشن جنت کی نہ ہو آرزو اس کو

    مسکن ہے اگر کوچۂ جانانہ کسی کا

    اللہ رے رتبہ کہ ہوا قیس قدم بوس

    صحرا میں جو پہنچا کوئی دیوانہ کسی کا

    بھٹی میں جو ہو دفن کوئی بادہ کش رند

    گنبد ابھی ہو جائے گا خم خانہ کسی کا

    اللہ رے تجاہل مرے احباب سے پوچھا

    دیوانہ ہے کیا صابرؔ فرزانہ کسی کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites